شمالی وزیرستان میں پی ٹی ایم کا جلسہ عام، پاکستانی میڈیا کا بلیک آؤٹ

پشتون تحفظ موومنٹ نے اتوار کو شمالی وزیرستان کے صدر مقام میرانشاہ میں ایک بڑا جلسہ عام منعقد کیا۔اس جلسے سے تحریک کے رہنما منظور پشتین، اراکین قومی اسمبلی محسن داوڑ اور علی وزیر کے علاوہ پیپلز پارٹی کے سابق سینیٹر فرحت اللہ بابر، اے این پی کے سابق رہنما افراسیاب خٹک اور پختونخواہ ملی عوامی پارٹی کے سینیٹر عثمان کاکڑ نے بھی خطاب کیا۔

جلسے میں شرکت کے لیے پی ٹی ایم کے اراکین دور دور سے گاڑیاں بھر کر میرانشاہ پہنچے تھے اور انہوں نے سفید و سیاہ پرچم اٹھا رکھے تھے۔

پاکستانی میڈیا میں پی ٹی ایم کے جلسے اور پریس کانفرنسیں دکھانے پر غیر اعلانیہ پابندی ہے۔ اتوار کو پاکستانی ٹی وی چینلوں پر گلگت بلتستان میں ووٹنگ کا موضوع حاوی رہا لیکن میرانشاہ کے جلسے کو یکسر بلیک آؤٹ کر دیا گیا۔

اس موقع پر منظور پشتین نے کہا، وہ لوگ جو کہتے ہیں کہ پی ٹی ایم ختم ہو گئی ہے وہ آج یہاں آ کر دیکھیں تو انہیں ہر طرف پی ٹی ایم ہی نظر آئے گی‘‘۔رکن قومی اسمبلی محسن داوڑ نے کہا کہ یہ عظیم الشان جلسہ ایک عوامی ریفرنڈم ہے، جس میں لوگ دہشت گردی کا نشانہ بننے والوں کے لیے انصاف کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے لوگ آئندہ ریاست کے کسی کھیل میں استعمال ہونے کے لیے تیار نہیں۔

اس موقع پر شرکاء نے شہریوں کی  جبری گمشدگیوں، قتل اور زیادتیوں کے خاتمے کے ساتھ ساتھ عسکری اداروں سے آئین و قانون کی پاسداری کا مطالبہ کیا۔

یادرہے کہ پاکستان میں فوجی اور کئی دیگر حلقے پی ٹی ایم پر الزام لگاتے آئے ہیں کہ اسے افغانستان اور بھارت کی حمایت حاصل ہے اور یہ تنظیم ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہے۔

پی ٹی ایم ان الزامات کو سرکاری پروپیگنڈا قرار دے کر رد کرتی ہے۔ تنظیم کا کہنا ہے کہ وہ پاکستانی آئین میں دیے گئے شہری حقوق کے لیے پرامن جدوجہد پر یقین رکھتی ہے۔ تنظیم کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ غداری کے سرٹیفیکیٹ بانٹنے والے اپنیعوام دشمن پالیسیوں‘ پر نظر ثانی کریں۔

پختون رہنماؤں کا کہنا ہے کہ اگر طالبان افغانستان میں اسلامی شریعت نافذ کرنے کا نعرہ لگاتے ہیں تو پاکستانی ریاست حمایت کرتی ہے اور اگر افغانستان کے عوام پی ٹی ایم کی اس لیے حمایت کرتے ہیں کہ اس سے ریاست کی دفاعی گہرائی کی پالیسی کو زد پہنچتی ہےاور اس پالیسی کے خاتمہ سے ہی  افغانستان میں جاری قتل و غارت کا خاتمہ ہوسکتا ہے۔ لیکن ریاست الزام تراشیوں پر اتر آتی ہے۔ پاکستانی ریاست نے پچھلی کئی دہائیوں سے جہاد کے نام پر ڈیورنڈ لائن کے دونوں طرف بسنے والے پختونوں کا قتل عام کیا ہے اور اب وقت آگیا ہے کہ اس قتل عام کو روکا جائے۔

پی ٹی ایم کا مطالبہ رہا ہے کہ ریاستی زیادتیوں‘ کی تحقیقات کے لیے کمیشن قائم کیا جائے، ذمہ داروں کو قانون کے مطابق سزا ملے، جھوٹے مقدمات واپس لیے جائیں، دہشت گردی کا نشانہ بننے والے خاندانوں کو معاوضہ دیا جائے اور حالات میں بہتری کے ایک مصالحتی کمیشن قائم کیا جائے۔

dw.com/urdu & web desk

One Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *