مسئلہ کشمیر: بامعنی گفتگواور با مقصد پالیسی کی ضرورت

  بیرسٹر حمید باشانی

اگست2016 کے آخری ہفتےمیں نے یہ کالم لکھا تھا۔ فیس بک نےیادوں کے ذخیرے سے یہ کالم نکال کر پیش کر دیا۔ پانچ سال پہلے یہ کالم میں نے آزادکشمیر کے اس وقت کے نئے صدر کے حلف اٹھانے کے موقع پر لکھا تھا۔ اتفاق سے گزشتہ دنوں بھی آزاد کشمیر میں  بیرسٹر سلطان نے نئے صدر کے طور پر حلف اٹھایا ہے۔  اس موقع پرمجھے یہ  پراناکالم پڑھ کر لگا کہ پانچ سال پہلے کالم میں پیش کیا جانے والا تجزیہ آج بھی اتنا ہی نیا اور متعلقہ ہے۔

ہمارے ہاں تبدیلی کے نام پر فقط نام اور چہرے تبدیل ہوتے رہے ہیں۔  نظام وہی پرانا رہتا ہے، اور پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آتی۔  اس  بات میں ہمارے لیے غور و فکر کی دعوت ہے کہ ہم کس طرح وقت اور زمانے سے بچھڑ کر ایک جگہ پر منجمد ہو گئے ہیں۔  اور ہم فرسودگی کا شکار ہو کر ایک دائرے میں گھوم رہے ہیں۔ ہم نے اپنے آپ کو ایک تاریک سرنگ میں بند کر لیا ہے، جہاں ہم اپنے ہی بیانات کی بازگشت سن کرخوش ہو رہے ہیں۔

پانچ برس قبل میں  نےلکھا تھا کہ آزادکشمیر میں نئے صدر جناب مسعود خان نے حلف اٹھا لیا ہے۔ حلف اٹھانے کے بعد انہوں نے اعلان کیا ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کریں گے۔ لفظ اجاگرکو اپ باٹم لائن یا کی ورڈ کہہ سکتے ہیں۔ یہ لفظ سنتے ہی اندازہ ہو جاتا ہے کہ آئندہ پانچ سال تک موصوف کے اس موضوع پر کس قسم کے بیانات آئیں گے۔ موصوف کن کن ممالک کا دورہ کریں گے۔ کن کن شخصیات سے ملاقات کریں گے۔ کن کن کانفرنسزمیں شرکت کریں گے۔ کن فورمز سے خطاب کریں گے۔ مسئلہ کشمیر اجاگر کرنے کے اس عمل کے دوران دیگر کاموں کے علاوہ جو کام لازمی طور پر ان کو کرنے پڑیں گے ان میں کشمیر کے حوالے سے قومی اہمیت کے دن بنانا ہے۔ ان دنوں میں یوم تاسیس، یوم یکجہتی وغیر ہ کے دن شامل ہیں۔

اس عمل کے دوران ان کو آزاد کشمیرمیں کئی عوامی اجتماعات سے خطاب کرنا پڑے گا۔ ان خطابات کے دوران موصوف یہ فرمائیں گے کہ اس دھرتی کی ازادی کی خاطر ہم لوگ صدیوں سے قربانی دیتے آئے ہیں۔ اس دھرتی کی خاطر ہمارے آبا واجداد کی زندہ کھالیں اتروائی گئیں۔ پھر ہمارے بزرگوں نے ڈوگروں سے لڑ کر آزادی حاصل کی۔ اس علاقے کو آزادی کا بیس کیمپ بنایا۔ اور ہماری آزادی کی یہ جنگ آج بھی جاری ہے۔ ہمارے بھائی  مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے خلاف سر بکفن ہیں۔ بھارت اب کشمیریوں کو زیادہ دیر تک غلام نہیں رکھ سکتا۔ کشمیر کی آزادی کا وقت آگیا ہے۔

اس طرح وہ ساٹھ  سترسال سے دہرائے جانے والے مکالموں کو ایک بار پھر ان ہی الفاط میں، کامے اور فل سٹاپ سمیت دہرا کر آزاد کشمیر اور پاکستان میں مختلف مقامات پر مسئلہ کشمیر کر اجاگر کریں گے۔ مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے کے لیے ان کو بیرون ممالک کے اکثر دوروں کا کشٹ بھی اٹھانا پڑے گا،  تاکہ وہ مسئلہ کشمیر پر ہونے والی مختلف کانفرنسزمیں شرکت کر یں اور اعلی شخصیات سے مل سکیں۔ ان میں اوآئی سی کی کانفر س سر فہرست ہے۔ اس کانفرنس میں وہ اسلامی ممالک کی اس تنظیم کوسینکڑوں بار یقین دلانے کے بعد ایک  بار پھر یقین دلائیں گے کہ بھارت کشمیر ی مسلمانوں پر ظلم کر رہا ہے، اس لیے او آئی سی میں بھارت کے خلاف قراداد مذمت منظور کی جائے۔

اس کے بعد وہ چند شہروں کے ہنگامی دورے کے دوران پاکستانی سفارت خانوں کے تعاون سے منعقد ہونے والی کشمیر کانفرنسز میں شرکت کر کے مسئلہ کشمیر کو اجاگر کریں گے۔ اس کے بعد وہ کچھ ممبران پارلیمنٹ، انسانی حقوق کے نمائندوں اور کمیونٹی کے چیدہ چیدہ افراد کے ساتھ ملاقاتوں میں مسئلہ کشمیر پر بات کریں گے۔

گویا موصوف وہی کام کریں گے، جو آزاد کشمیر کے سابق صدور یا وزرائے اعظم گزشتہ پچاس سالوں سے کر رہے ہیں۔ ان سر گرمیوں کے ذریعے ظاہر ہے مسئلہ کشمیر حل نہیں ہو گا، البتہ اجاگر ضرور ہو گا، جیسا کہ یہ نصف صدی سے اجاگر ہوتا آیا ہے ۔ تنازعہ کشمیر کی شروعات میں کچھ لیڈر تھے، جو مسئلہ کشمیر کے حل کی بات کرتے تھے، یا عوام سے اس کو حل کرنے کا وعدہ کرتے تھے۔ کچھ عرصہ بعد کشمیری لیڈروں نے حل کے بجائے اجاگر کرنے کا لفظ استعمال کرنا شروع کر دیا۔ اس اجاگر کرنے سے نہ تومسئلہ کشمیر حل ہوتا ہے، اور نہ ہی کشمیریوں کے مصائب میں کوئی کمی آتی ہے۔

اجاگر کرنے کی اس پالیسی کے تحت جس عالمی سطح پر ہم یہ مسئلہ اٹھا رہے ہیں، اس کو باریک بینی سے دیکھا جائے تو یہ عوام کے ساتھ ایک مذاق کے علاوہ کچھ نہیں۔ یہ جو عالمی سطح پر کانفرنسز ہوتی ہیں، ان سے عالمی رائے عامہ مکمل طور پر بے خبر ہوتی ہے۔ ان کانفرنسزمیں دیسی بنکویٹ ہالوں یا ریستورانٹوں میں دیسی لوگوں کو بار بار جمع کر کے وہی بات دہرائی جاتی ہے، جو گزشتہ پچاس سال سے ہو رہی ہے۔ اس طرح کی کانفرنسز کا اگر کسی کو فائدہ ہوتا ہے تو وہ  بنکوئٹ ہال کے مالکان کو یا  تصویریں بنوانے کے شوقین  خواتین و حضرات یا ان خود ساختہ  لیڈران کو جن کا روزگار ہی اس طرح کی سرگرمیوں سے وابستہ ہے۔ اس کانفرنس کی خبر نہ تو مقامی زرائع ابلاغ کو ہوتی ہے، نہ ہی مقامی لوگوں کو، مگر ہمارے نزدیک یہ کانفرنس عالمی ہوتی ہے، اور مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اٹھانے کے لیے بلائی گئی ہوتی ہے۔ جن ممبران پارلیمنٹ سے بات کی جاتی ہے ،وہ اپنے ووٹر کو خوش کرنے کے لیے ملاقات کے دوران سرتو ہلاتے رہتے ہیں ، لیکن اس موقع کے بعد پھر اس موضوع پر کبھی کسی سے ایک لفظ تک نہیں کہتے۔ مگر ہمارے لیڈر اس دورے کے بعد فاتحانہ انداز میں اسلام اباد ائیر پورٹ پر پہنچ کر اپنے کامیاب دورے کی نوید سناتے ہیں، جیسے کشمیر فتح کر کے آ رہے ہوں۔

اجا گر کرنے کی یہ لا حاصل اور بے سود مشق ستر سال سے جاری ہے۔ اور یہ جاننے کے لیے کوئی بہت زیادہ عقل مند ہونا ضروری نہیں کہ ائندہ سو سال تک بھی ایسی فضول مشق کا کوئی نتیجہ نہیں نکلے گا۔ یہ مشق بنیادی طور پر ایک ناکام اور بانجھ کشمیر پالیسی کی عکاس ہے۔ اس تجربے کی روشنی میں آزاد کشمیر کے نئے صدر صاحب کو اپنے طویل سفارتی تجربے کی روشنی میں اس حقیقت کا ادراک ہونا چاہیے کہ اس پالیسی کے تحت ہم کبھی کشمیر نہیں لے سکتے۔ یہ پالیسی کشمیر کے غریب  عوام کے ساتھ سنگین مذاق اور ان کے وسائل کی لوٹ کے مترادف ہے۔ چنانچہ ان لیڈروں کو چاہیے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو اجاگر کرنے کے اس رولر کوسٹرپر چڑھنے سے پہلے اس بے نتیجہ پالیسی میں بنیادی تبدیلی کی بات اٹھائیں۔  کشمیر پالیسی کو جدید دور کے تقاضوں سے ہم آہنگ کرائیں۔ ایسا کیے بغیر اس مسئلے کا کوئی حل نہیں نکل سکتا۔

یہ کوئیکریڈٹکی بات نہیں ہے کہ ہم ستر سال سے مسئلہ کشمیر پر ایک ہی بات دہرا رہے ہیں۔ اس کے بجائے منطق اور جدید سفارتی تقاضوں کے مطابق یہڈس کریڈٹ ہے کہ ہم ستر سال سے ایسی بات پر اصرار کر رہے ہیں، جس کا کوئی مثبت نتیجہ نہیں نکل رہا ہے۔ چنانچہ اگر مقصد صرف مسئلہ کشمیر اجاگر کرنا ہی نہیں، بلکہ حل بھی کرنا ہے، تو اس کے لیے اپنی فرسودہ اور بانجھ پالیسی میں تبدیلی لانی ہو گی۔  ستر سال پرانے رٹے رٹائے اور لکھے ہوئے مکالمے ایک طرف لکھ کر نئی اوربا معنی زبان میں بات کرنی ہوگی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *